Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements - Seacod Cod Liver oil Vitamin D - Benefits of Healthy Food Essay in Gcc Health Shop

Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements – Seacod Cod Liver oil Vitamin D

Author:

Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements – Seacod Cod Liver oil Vitamin D

Daily Use of Vitamin D and Fish Oil Supplements Beneficial?

Daily intake of vitamin D or fish oil capsules may help reduce the risk of joint pain.

This was revealed in a medical study conducted in the United States.

Research from Bergham and Women’s Hospital found that middle-aged people who took vitamin D supplements daily had a 22 percent lower risk of autoimmune diseases.

Also read: How to use Fish Oil for Health Benefits?

Similarly, those who take fish oil capsules daily have an 18% reduction in this risk.

In autoimmune diseases, the body’s own immune cells attack healthy tissues, increasing the risk of diseases such as arthritis and psoriasis.

About 26,000 middle-aged people were included in the study, and the results were released after a five-year trial.

The study participants were divided into 4 groups, one group was given vitamin D, the other was given fish oil capsules and the other 2 groups were given placebo.

The first group was given a daily dose of 2000 IU (international units) and the results were compared with the second group using the same amount of placebo.

One thousand milligrams of fish oil capsules were used and the last group was given a placebo in the same amount.

After 5 years of trial, autoimmune diseases were confirmed with the help of medical records.

The study found that only 123 people in the vitamin D group had an autoimmune disease, compared to 155 in the placebo group.

According to researchers, this suggests that the use of vitamin D supplements reduces the risk of autoimmune diseases by 22%.

On the other hand, 130 cases were confirmed in the group using fish oil capsules, while 148 people in the placebo group were exposed to autoimmune diseases, meaning that the first group had a 15 to 18 percent lower risk.

There was also evidence that prolonged use of fish oil capsules may increase protection.

Although autoimmune diseases are common in the elderly, experts have not yet been able to find a way to reduce their risk in humans, the researchers said.

“We are now excited to test the effects of vitamin D and fish capsules in young people,” he said.

However, he said that the results could not be applied to those who have developed autoimmune diseases in their youth.

He says more research is needed to find out why supplements provide protection, but the results suggest that they may reduce the risk of autoimmune diseases.

The results of the study were published in the medical journal British Medical Journal.

(  Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements, fish oil supplements, vitamin d and omega-3 fatty acid, heart attacks, fatty acids, randomized double blind placebo controlled, preventive medicine, aged 50, autoimmune disease, rheumatoid arthritis, high dose, older adult, vital trial, vitamin d deficient, developing cancer, study published, heart disease, reduce the risk, vitamin d supplementation, omega-3 fatty acid supplementation, fish oil and vitamin, cod liver oil have vitamin d, cod liver oil omega 3 vitamin a and d, omega 3 fish oil contains vitamin d, seacod cod liver oil vitamin d, )

Also read: Is Olive Oil Good for Heart Health

 

 

Fish or Fish Oil Supplements?

Both fish and fish oil supplements contain significant fundamental Omega 3 unsaturated fats required for great wellbeing, however as we will see, it isn’t simply any old fish and nor is it any old fish oil that can do the occupation appropriately.

The Paradox

The present customers should be exceptionally befuddled with regards to apparently incongruous counsel about eating fish. The food norms office says a great many people ought to eat all the more slick fish like Salmon, Tuna, Herring and Mackerel, on the grounds that the Omega 3 unsaturated fats they contain are really great for our wellbeing. And yet they limit the prescribed day by day adds up to 2 bits of sleek fish seven days for ladies and young ladies who might need to have a child one day and for breastfeeding moms, and 4 parts for every other person. So first we are told to eat more fish to acquire the unprecedented medical advantages of Omega 3, however at that point we are told not to eat an excess of on the grounds that our fish are dirtied with poisons, especially methylmercury. How are we expected to manage this counsel? Maybe we should take a gander at the amount Omega 3 we really need.

Omega 3 – how much is sufficient?

No authority proposal exists regarding the amount Omega 3 is expected for ideal wellbeing however on a singular premise the ideal sum is connected to our admission of Omega 6. The more Omega 6 unsaturated fats that we consume, the more Omega 3 unsaturated fats we really want to balance the irregularity. Above all else it may assist with clarifying that the body can’t orchestrate Omega 3, or Omega 6 unsaturated fats besides, so we need to depend absolutely on our eating regimens to get them. Presently here’s the astonishing part.

The greater part of us today are eating slims down that are inadequate in the mitigating Omega 3 unsaturated fats yet over the top in favorable to fiery Omega 6. Throughout the course of recent years or so our utilization of fish has definitely reduced and simultaneously we are eating more handled food varieties, grains and vegetable oils. These food sources aren’t awful in themselves it is only that this irregularity in our weight control plans is accepted by some to be the underlying driver of a gigantic ascent in provocative conditions, coronary illness and burdensome problems, henceforth the requirement for more Omega 3.

The significant Omega 3 unsaturated fats are Eicosapentaenoic corrosive and Docosahexaenoic corrosive or EPA and DHA. As a rule, 1g of EPA/DHA day by day is viewed as enough for everybody. To provide you with a thought of what this likens to in genuine terms, to get this measure of EPA/DHA from the eating regimen, you would need to consume a 3-oz piece of salmon each and every day, seven days per week.

Remembering the poisonousness issue, one may believe it’s more secure to get Omega 3 from fish oil supplements, yet here’s the ‘trick’. Fish oil is produced using exactly the same fish in the ocean, so it makes sense that fish oil enhancements can be harmful too except if obviously the fish oil has been cleaned.

What kinds of fish oils are there and which one is ideal?

To lay it out plainly, there are essentially 3 kinds of fish oil accessible.

o Cod Liver Oil

o Standard fish oil

o High-grade concentrated fish oil

Cod liver oil is delivered from the liver of fish and in spite of the fact that contains high measures of Omega 3, the liver is the place where the vast majority of the poisons are put away thus conceivably, cod liver oil can contain an undeniable degree of toxins. Cod liver oil likewise contains high measures of vitamin An and D and a lot of can bring about Vitamin A harmfulness.

Standard fish oils are created from the tissue of the fish instead of the liver of fish however once more, they can contain contaminations as whatever was in the fish at the time it was gotten is moved to the oil. How much Omega 3 unsaturated fats they contain can likewise shift contingent upon various elements including the season, natural conditions and so on

High-grade concentrated fish oil enjoys an upper hand over the others in that not just has every one of the contaminations been taken out, the oil can be concentrated to contain a lot more significant levels of Omega 3. For instance, groupings of 70% EPA is conceivable thus less containers are expected to deliver a similar outcome. With a portion of the standard fish oils, 5 or 6 containers are required each day. EPA is quickly acquiring acknowledgment as the main unsaturated fat as the body can deliver DHA when enough EPA is available however this isn’t compelling the alternate way round.

End

To date there has been no genuine investigations done on whether there is a huge distinction or advantage in getting Omega 3 from new fish or from fish oil supplements. Notwithstanding, the way things are today, apparently the best way to guarantee a solid admission of Omega 3 without the danger of unsafe poisons is to take a high-grade fish oil supplement that has experienced cycles to sift through the contaminations.

( Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements, fish oil supplements, vitamin d and omega-3 fatty acid, heart attacks, fatty acids, randomized double blind placebo controlled, preventive medicine, aged 50, autoimmune disease, rheumatoid arthritis, high dose, older adult, vital trial, vitamin d deficient, developing cancer, study published, heart disease, reduce the risk, vitamin d supplementation, omega-3 fatty acid supplementation, fish oil and vitamin, cod liver oil have vitamin d, cod liver oil omega 3 vitamin a and d, omega 3 fish oil contains vitamin d, seacod cod liver oil vitamin d, )

Also read: Breakthrough Study Finds Association Between Fish Oil Supplements, Heart Rhythm Disorder

Vitamins in Fish Oil Supplements

Fish oil supplements give the advantages of the omega-3 unsaturated fats. These supplements are fundamental to may of the body’s capacities and must be acquired through diet or supplemental sources. Numerous items available today accompanied the additional advantage of extra nutrients that are either added to the enhancement or happen normally in the species that the fish oil has been removed from. To stay away from harmful degrees of nutrients, the legitimate dose ought to be stuck to, and cautious consideration should be given to the fixings in the enhancement.

Vitamin E

The National Institute of Health reports that after some time, utilization of fish oil enhancements can make a lack in the assemblage of vitamin E. To forestall this, vitamin E is added to a significant number of the enhancements that are accessible available. The U.S. Division of Agricultural has revealed that to eliminate the danger of lack of vitamin E, this oil enhancements should be taken that incorporate the nutrient. Likewise, taking a vitamin E supplement related to fish oil might be thought of.

Vitamin D

This nutrient is found in high focuses in cod liver oil, which is extraordinary for renewing vitamin D levels. This nutrient is made in the body and furthermore from openness to warm daylight. Many individuals don’t get sufficient daylight and supplemental vitamin D gives an answer. While taking cod liver oil, exceptional consideration should be given to how much vitamin D that is being ingested to forestall harmfulness.

Vitamin A

Vitamin An is another significant supplement that assists with advancing great skin and vision. It is added to this oil supplements for its advantages. Similarly as with vitamin D, an excess of vitamin A can make poisonousness issues that could become destructive. Numerous regular food sources contain these nutrients and their absolute admission should be viewed as while taking fish oil supplements.

( Benefits of Vitamin and Fish Oil Supplements, fish oil supplements, vitamin d and omega-3 fatty acid, heart attacks, fatty acids, randomized double blind placebo controlled, preventive medicine, aged 50, autoimmune disease, rheumatoid arthritis, high dose, older adult, vital trial, vitamin d deficient, developing cancer, study published, heart disease, reduce the risk, vitamin d supplementation, omega-3 fatty acid supplementation, fish oil and vitamin, cod liver oil have vitamin d, cod liver oil omega 3 vitamin a and d, omega 3 fish oil contains vitamin d, seacod cod liver oil vitamin d, )

 

وٹامن ڈی اور مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس کا روزانہ استعمال فائدہ مند؟

وٹامن ڈی یا مچھلی کے تیل کے کیپسولز کا روزانہ استعمال جوڑوں کے تکلیف دہ امراض کا خطرہ کم کرنے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔

یہ بات امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی
برگھم اینڈ ویمنز ہاسپٹل کی تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ درمیانی عمر کے جو افراد روزانہ وٹامن ڈی سپلیمنٹس کا استعمال کرتے ہیں ان میں آٹو امیون امراض کا خطرہ 22 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

اسی طرح مچھلی کے تیل کے کیپسولز روزانہ کھانے والے افراد میں یہ خطرہ 18 فیصد تک گھٹ جاتا ہے۔

آٹو امیون امراض میں جسم کے اپنے مدافعتی خلیات صحت مند ٹشوز پر حملہ آور ہوجاتے ہیں جس کے نتیجے میں جوڑوں کے امراض اور چنبل جیسی بیماری کا خطرہ بڑھتا ہے۔

اس تحقیق میں درمیانی عمر کے لگ بھگ 26 ہزار افراد کو شامل کیا گیا اور 5 سال طویل ٹرائل کے بعد نتائج جاری کیے گئے۔

تحقیق میں شامل افراد کو 4 گروپس میں تقسیم کیا گیا جن میں سے ایک گروپ کو وٹامن ڈی، دوسرے کو مچھلی کے تیل کے کیپسولز اور دیگر 2 گروپس کو پلیسبو استعمال کرایا گیا۔

پہلے گروپ کو روزانہ 2000 آئی یو (انٹرنیشنل یونٹس) ڈوز استعمال کرایا گیا اور اتنی ہی مقدار میں پلیسبو استعمال کرنے والے دوسرے گروپ سے نتائج کا موازنہ کیا گیا۔

مچھلی کے تیل کے کیپسولز کی ایک ہزارملی گرام مقدار کا استعمال کرایا گیا اور آخری گروپ کے افراد کو اتنی مقدر میں پلیسبو دیا گیا۔

5 سال کے ٹرائل کے بعد آٹو امیون امراض کی تصدیق میڈیکل ریکارڈز کی مدد سے کی گئی۔

تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ وٹامن ڈی گروپ میں شامل صرف 123 افراد میں کسی آٹو امیون مرض کی تصدیق ہوئی جبکہ پلیسبو گروپ میں یہ تعداد 155 تھی۔

محققین کے مطابق اس سے عندیہ ملتا ہے کہ وٹامن ڈٰ سپلیمنٹس کے استعمال سے آٹو امیون امراض کا خطرہ 22 فیصد تک کم ہوجاتا ہے۔

دوسری جانب مچھلی کے تیل کے کیپسولز استعمال کرنے والے گروپ میں 130 کیسز کی تصدیق ہوئی جبکہ پلیسبو گروپ میں 148 افراد کو آٹو امیون امراض کا سامنا ہوا، یعنی پہلے گروپ کو 15 سے 18 فیصد کم خطرے کا سامنا ہوا۔

ایسے بھی شواہد دریافت ہوئے جن سے عندیہ ملا کہ زیادہ طویل عرصے تک مچھلی کے تیل کے کیپسولز کا استعمال تحفظ کی شرح کو بڑھا سکتا ہے۔

محققین نے بتایا کہ آٹو امیون امراض اگرچہ بزرگ افراد میں عام ہیں مگر اب تک ماہرین لوگوں میں ان کے خطرے میں کمی کا طریقہ دریافت نہیں کرسکے تھے۔

انہوں نے کہا کہ اب ہم جوان افراد میں وٹامن ڈی اور مچھلی کے کیپسولز کے اثرات کو جانچنے کے لیے پرجوش ہیں۔

مگر ان کا کہنا تھا کہ نتائج کا اطلاق ممکنہ طور پر ان افراد پر نہیں ہوسکتا جن میں جوانی میں آٹو امیون امراض تشکیل پاچکے ہوں۔

انہوں نے کہا کہ سپلیمنٹس کے تحفظ فراہم کرنے کی وجوہات جاننے کے لیے مزید تحقیق کی ضرورت ہے مگر نتائج سے عندیہ ملتا ہے کہ اس سے آٹو امیون امراض کا خطرہ کم کیا جاسکتا ہے۔

اس تحقیق کے نتائج طبی جریدے برٹش میڈیکل جرنل میں شائع ہوئے۔

 

مچھلی یا مچھلی کے تیل کی سپلیمنٹس؟

مچھلی اور مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس دونوں میں اہم بنیادی اومیگا 3 غیر سیر شدہ چکنائی ہوتی ہے جو اچھی صحت کے لیے ضروری ہے، تاہم جیسا کہ ہم دیکھیں گے، یہ صرف کوئی پرانی مچھلی نہیں ہے اور نہ ہی یہ کوئی پرانا مچھلی کا تیل ہے جو مناسب طریقے سے کام کر سکتا ہے۔

پیراڈاکس

موجودہ گاہکوں کو مچھلی کھانے کے بارے میں بظاہر متضاد مشورے کے حوالے سے غیر معمولی طور پر پریشان ہونا چاہیے۔ فوڈ نارمز آفس کا کہنا ہے کہ بہت سارے لوگوں کو زیادہ چکنی مچھلیاں کھانی چاہئیں جیسے سالمن، ٹونا، ہیرنگ اور میکریل، اس بنیاد پر کہ ان میں موجود اومیگا 3 غیر سیر شدہ چکنائی ہماری صحت کے لیے واقعی بہترین ہے۔ اور پھر بھی وہ روزانہ مقررہ حد تک محدود کرتے ہیں جن خواتین اور نوجوان خواتین کو ایک دن بچہ پیدا کرنے کی ضرورت پڑسکتی ہے اور دودھ پلانے والی ماؤں کے لیے سات دن تک چیکنا مچھلی کے 2 بٹس اور ہر دوسرے فرد کے لیے 4 حصے۔ اس لیے سب سے پہلے ہمیں اومیگا 3 کے بے مثال طبی فوائد حاصل کرنے کے لیے زیادہ مچھلی کھانے کو کہا جاتا ہے، تاہم اس وقت ہمیں اس بنیاد پر زیادہ مچھلی نہ کھانے کو کہا جاتا ہے کہ ہماری مچھلی زہروں، خاص طور پر میتھائلمرکری سے آلودہ ہے۔ ہم سے اس مشورے کا انتظام کیسے کرنے کی توقع کی جاتی ہے؟ ہوسکتا ہے کہ ہمیں اومیگا 3 کی اس مقدار پر غور کرنا چاہئے جس کی ہمیں واقعی ضرورت ہے۔

اومیگا 3 – کتنا کافی ہے؟

مثالی صحت کے لیے اومیگا 3 کی توقع کی جانے والی مقدار کے بارے میں کوئی اتھارٹی تجویز موجود نہیں ہے تاہم ایک واحد بنیاد پر مثالی رقم ہمارے اومیگا 6 کے داخلے سے جڑی ہوئی ہے۔ جتنی زیادہ اومیگا 6 غیر سیر شدہ چکنائیاں ہم کھاتے ہیں، اتنی ہی زیادہ اومیگا 3 غیر سیر شدہ چربی ہم واقعی چاہتے ہیں۔ بے قاعدگی کو متوازن کرنے کے لیے۔ سب سے بڑھ کر یہ واضح کرنے میں مدد کر سکتا ہے کہ جسم اس کے علاوہ اومیگا 3، یا اومیگا 6 غیر سیر شدہ چکنائیوں کو آرکیسٹریٹ نہیں کر سکتا، اس لیے ہمیں انہیں حاصل کرنے کے لیے اپنے کھانے کے طریقہ کار پر مکمل انحصار کرنے کی ضرورت ہے۔ فی الحال یہاں حیران کن حصہ ہے۔

آج ہم میں سے زیادہ تر حصہ پتلی کھا رہے ہیں جو کہ اومیگا 3 غیر سیر شدہ چکنائیوں کو کم کرنے میں ناکافی ہیں لیکن وہ اومیگا 6 کے لیے موزوں ہے۔ زیادہ سنبھالے ہوئے کھانے کی اقسام، اناج اور سبزیوں کا تیل کھانا۔ یہ کھانے کے ذرائع اپنے آپ میں خوفناک نہیں ہیں صرف یہ ہے کہ ہمارے وزن پر قابو پانے کے منصوبوں میں اس بے ضابطگی کو کچھ لوگوں نے اشتعال انگیز حالات، کورونری بیماری اور بوجھل مسائل میں ایک بہت بڑا عروج کا بنیادی ڈرائیور مان لیا ہے، اس کے بعد مزید اومیگا 3 کی ضرورت ہے۔ .

اہم اومیگا 3 غیر سیر شدہ چربی Eicosapentaenoic corrosive اور Docosahexaenoic corrosive یا EPA اور DHA ہیں۔ ایک اصول کے طور پر، روزانہ 1 گرام EPA/DHA ہر ایک کے لیے کافی سمجھا جاتا ہے۔ آپ کو یہ سوچنے کے لیے کہ یہ حقیقی معنوں میں کس چیز سے تشبیہ دیتا ہے، کھانے کے طریقہ کار سے EPA/DHA کا یہ پیمانہ حاصل کرنے کے لیے، آپ کو ہر روز، ہفتے میں سات دن سالمن کا 3 اوز ٹکڑا استعمال کرنا ہوگا۔

زہریلے پن کے مسئلے کو یاد کرتے ہوئے، کوئی یقین کر سکتا ہے کہ مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس سے اومیگا 3 حاصل کرنا زیادہ محفوظ ہے، پھر بھی یہ ‘ٹرک’ ہے۔ مچھلی کا تیل سمندر میں بالکل اسی مچھلی کا استعمال کرتے ہوئے تیار کیا جاتا ہے، لہذا یہ سمجھ میں آتا ہے کہ مچھلی کے تیل میں اضافہ بھی نقصان دہ ہو سکتا ہے سوائے اس کے کہ ظاہر ہے کہ مچھلی کے تیل کو صاف کر دیا گیا ہو۔

مچھلی کے تیل کس قسم کے ہیں اور کون سا مثالی ہے؟

اسے صاف صاف بتانے کے لیے، بنیادی طور پر 3 قسم کے مچھلی کے تیل قابل رسائی ہیں۔

 کاڈ لیور آئل

 معیاری مچھلی کا تیل

اعلیٰ درجے کا مرتکز مچھلی کا تیل

کوڈ لیور آئل مچھلی کے جگر سے فراہم کیا جاتا ہے اور اس حقیقت کے باوجود کہ جس میں اومیگا 3 کی مقدار زیادہ ہوتی ہے، جگر وہ جگہ ہے جہاں زہروں کی اکثریت کو دور کر دیا جاتا ہے اس طرح بخوبی اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ کاڈ لیور آئل ناقابل تردید ڈگری پر مشتمل ہو سکتا ہے۔ ٹاکسن کی. اسی طرح کاڈ لیور آئل میں وٹامن اے اور ڈی کے اعلیٰ پیمانے ہوتے ہیں اور بہت سارے وٹامن اے کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔

معیاری مچھلی کے تیل مچھلی کے جگر کی بجائے مچھلی کے ٹشو سے بنائے جاتے ہیں تاہم ایک بار پھر، ان میں آلودگی ہوسکتی ہے کیونکہ مچھلی میں جو کچھ تھا اس وقت اسے تیل میں منتقل کیا جاتا ہے۔ ان میں کتنی اومیگا تھری غیر سیر شدہ چکنائی ہوتی ہے اسی طرح موسم، قدرتی حالات اور اسی طرح کے مختلف عناصر پر دستک دے سکتی ہے۔

اعلی درجے کے مرتکز مچھلی کے تیل کو دوسروں پر برتری حاصل ہے جس میں نہ صرف ہر ایک آلودگی کو نکالا گیا ہے، بلکہ تیل کو اومیگا 3 کی بہت زیادہ اہم سطحوں پر مشتمل کرنے کے لیے مرتکز کیا جا سکتا ہے۔ مثال کے طور پر، 70% کی گروپ بندی EPA قابل فہم ہے اس لیے کم کنٹینرز سے اسی طرح کے نتائج کی توقع کی جاتی ہے۔ معیاری مچھلی کے تیل کے ایک حصے کے ساتھ، ہر روز 5 یا 6 کنٹینرز کی ضرورت ہوتی ہے۔ EPA تیزی سے اہم غیر سیر شدہ چربی کے طور پر تسلیم کر رہا ہے کیونکہ کافی EPA دستیاب ہونے پر جسم DHA فراہم کر سکتا ہے تاہم یہ متبادل طریقے سے مجبور نہیں ہے۔

ختم

آج تک اس بارے میں کوئی حقیقی تحقیقات نہیں کی گئی ہیں کہ آیا نئی مچھلی سے یا مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس سے اومیگا 3 حاصل کرنے میں کوئی بڑا فرق یا فائدہ ہے۔ اس کے باوجود، آج جس طرح کے حالات ہیں، بظاہر غیر محفوظ زہروں کے خطرے کے بغیر اومیگا 3 کے ٹھوس داخلے کی ضمانت دینے کا بہترین طریقہ یہ ہے کہ ایک اعلیٰ درجے کے مچھلی کے تیل کا ضمیمہ لیا جائے جس نے آلودگیوں کو چھاننے کے لیے سائیکلوں کا تجربہ کیا ہو۔

مچھلی کے تیل کی سپلیمنٹس میں وٹامنز

مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس اومیگا 3 غیر سیر شدہ چکنائی کے فوائد دیتے ہیں۔ یہ سپلیمنٹس جسم کی صلاحیتوں کے لیے بنیادی ہیں اور انہیں خوراک یا اضافی ذرائع سے حاصل کیا جانا چاہیے۔ آج دستیاب متعدد اشیاء اضافی غذائی اجزاء کے اضافی فائدے کے ساتھ ہیں جو یا تو اضافہ میں شامل کیے جاتے ہیں یا عام طور پر ان انواع میں ہوتے ہیں جن سے مچھلی کا تیل ہٹا دیا گیا ہے۔ غذائی اجزاء کی نقصان دہ ڈگریوں سے دور رہنے کے لیے، جائز خوراک پر قائم رہنا چاہیے، اور اضافہ میں فکسنگز پر محتاط غور کیا جانا چاہیے۔

وٹامن ای

نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ نے رپورٹ کیا ہے کہ کچھ عرصے کے بعد مچھلی کے تیل کی افزائش کے استعمال سے وٹامن ای کی کمی واقع ہوسکتی ہے۔ یو ایس ڈیویژن آف ایگریکلچرل نے انکشاف کیا ہے کہ وٹامن ای کی کمی کے خطرے کو ختم کرنے کے لیے اس تیل کو بڑھانا چاہیے جس میں غذائی اجزاء شامل ہوں۔ اسی طرح، مچھلی کے تیل سے متعلق وٹامن ای سپلیمنٹ لینے کے بارے میں سوچا جا سکتا ہے۔

وٹامن ڈی

یہ غذائیت کوڈ لیور آئل میں زیادہ فوکس میں پایا جاتا ہے، جو وٹامن ڈی کی سطحوں کی تجدید کے لیے غیر معمولی ہے۔ یہ غذائیت جسم میں بنتی ہے اور مزید یہ کہ کھلے پن سے گرم دن کی روشنی تک۔ بہت سے لوگوں کو کافی دن کی روشنی نہیں ملتی ہے اور اضافی وٹامن ڈی جواب دیتا ہے۔ کوڈ لیور آئل لیتے وقت، اس بات پر غیر معمولی غور کیا جانا چاہیے کہ نقصان کو روکنے کے لیے کتنا وٹامن ڈی کھایا جا رہا ہے۔

وٹامن اے

وٹامن این ایک اور اہم ضمیمہ ہے جو جلد اور بینائی کو بہتر بنانے میں مدد کرتا ہے۔ اسے اس کے فوائد کے لیے اس تیل کی سپلیمنٹس میں شامل کیا جاتا ہے۔ اسی طرح وٹامن ڈی کی طرح، وٹامن اے کی زیادتی زہریلے مسائل پیدا کر سکتی ہے جو تباہ کن ہو سکتی ہے۔ متعدد باقاعدگی سے کھانے کے ذرائع میں یہ غذائی اجزاء ہوتے ہیں اور ان کے مکمل داخلے کو مچھلی کے تیل کے سپلیمنٹس لینے کے دوران دیکھا جانا چاہئے۔

( Benefits of Vitamin and Fish Oil Supplements, fish oil supplements, vitamin d and omega-3 fatty acid, heart attacks, fatty acids, randomized double blind placebo controlled, preventive medicine, aged 50, autoimmune disease, rheumatoid arthritis, high dose, older adult, vital trial, vitamin d deficient, developing cancer, study published, heart disease, reduce the risk, vitamin d supplementation, omega-3 fatty acid supplementation, fish oil and vitamin, cod liver oil have vitamin d, cod liver oil omega 3 vitamin a and d, omega 3 fish oil contains vitamin d, seacod cod liver oil vitamin d, )

One thought on “Benefits of Vitamin D and Fish Oil Supplements – Seacod Cod Liver oil Vitamin D”

Leave a Reply

Your email address will not be published.